منشیات کے حوالے سے عالمی معلومات کا نیٹ ورک

ہماری جامع عالمی ڈائریکٹری کنسلٹ کریں

25 جولائی 2017

Teenagers sell drugs on social networking sites

A report of the third BBC channel revealed that children at the age of 15 claim to earn up to £ 300 a day through the use of social networking sites to sell drugs based on emoji symbols.

The Third Channel program looked at activity of those gangs on Snapchat and Instagram, as well as the dating app Yellow.

Above sites mentioned that users must report any illegal content they encounter.

But 72 hours after reporting users who sell drugs, their accounts were still active on the Internet.

Tai (not his real name), which the show contacted via "Snapchat", said that financial gains are addictive. He added that he earns 300 pounds a day through his activity on the Net.

The documentary found that dealers who were using emojis to disguise the true nature of the conversations with their customers.

Meanwhile, one of the largest drug gangs claims that three-quarters of their takings comes from selling through young people on social media apps.

In the documentary, the drug bosses show presenter Stacey Dooley a shipment of liquid cocaine from South America hidden in olive oil bottles and reveal how one gang member can make £26,000 in just two days.

Snapchat says in a statement: "We encourage all Snapchatters to report anything to us that doesn't belong on Snapchat, including by using our new in-app reporting tools."

Instagram says it encourages anyone who comes across content similar to that appearing in the film to report it via the in-built reporting tools.

The presenter of the show said she "fear is it is going to take something very tragic to happen to these kids before Yellow, Instagram and Snapchat wake up and take action”.

مزید پڑھیں >

24 جولائی 2017

Greece legalizes the use of medical marijuana

Greece has become the last European country to legalize the use of marijuana for medical purposes. Doctors can now prescribe this plant for their patients.

According to the British newspaper "The Independent", Greek Prime Minister Alexis Tsipras said last week that doctors will soon be able to prescribe this narcotic substance under medical conditions and a legal order.

Cannabis is usually prescribed for medical conditions such as muscle spasms, chronic pain, post-traumatic stress disorder, epilepsy and cancer.

The Greek government's official newspaper reported that the Prime Minister said at a press conference: "After the Czech Republic, Finland, the Netherlands, Portugal and Spain, Greece is now the sixth country Of the European Union to take this measure and legalize this drug for medical purposes ".

“The Independent” mentioned that the new law will help stimulate the economy as it allows the establishment of a legal drug industry. Greece will also be able to import cannabis-based medicines.

مزید پڑھیں >

23 جولائی 2017

گھر پر ہی منشیات کے علاج معالجے کے موّثر اقدامات

علت اور شراب نوشی کی لت میں مبتلا افراد کا علاج معالجہ کرنے والے ماہرین اور فزیشنز کی ترجیح یہی ہوتی ہے کہ علاج معالجہ صحت کے خصوصی مراکز میں کروایا جائے، تاہم بعض افراد کی خواہش ہوتی ہے کہ وہ اپنے ذاتی اسباب کے باعث علاج معالجہ گھر پر رہتے ہوئےکروائیں۔ ماہرین وضاحت کرتے ہیں کہ علت کا علاج معالجہ ایک سے دوسرے فرد میں مختلف ہوتا ہے اور اس کا انحصار کئی عوامل پر ہے جن میں علت کا دورانیہ، صحت اور نفسیاتی کیفیت اور اس فرد کا قوتِ ارادہ بھی شامل ہوتا ہے جو علاج معالجہ کروا رہا ہے۔

ان عوامل کے باعث مریض کو علاج معالجے کے لیے جو وقت درکار ہوتا ہے  وہ مختلف ہوسکتا ہے؛ اگر علت کو زیادہ وقت نہیں ہوا تو اس کا علاج معالجہ تین ماہ تک چل سکتا ہےاور اگر شدید قسم کی علت ہے اور علاج معالجے کے لیے جسمانی اور نفسیاتی آمادگی  میں کمی ہے تو ایسی صورت میں شاید ایک سال سے بھی زیادہ کا عرصہ لگ جائے۔

گھر پر علت کا علاج معالجہ شروع کرنے سے پہلے یہ انتہائی ضروری ہے کہ مریض اپنے آپ کو شفا دلوانے اور دوبارہ کبھی منشیات استعمال نہ کرنے کا سنجیدگی اور پوری ایمانداری سے عزم کرے۔علت میں مبتلا مریضوں کو جواقدامات کرنے ہوتے ہیں ان میں سب سے زیادہ اہم یہ ہے کہ ان کا ارادہ اور عزم بہت زیادہ مضبوط ہو اور ساتھ ہی انہیں اپنے احباب اور دوستوں کی جانب سے سماجی اور جذباتی مددبھی حاصل ہو۔ علاج معالجہ شروع کرنے سے پہلے یہ بہت اہم ہے کہ مریض چند اقدامات کرے ، ان میں سے اہم ترین یہ ہے کہ وہ  دیگر منشیات اور شراب استعمال کرنے والوں سے دور رہے ، اگر وہ کہیں کام کرتا ہے یا تعلیم حاصل کر رہا ہے تو وہاں سے باضابطہ طور پر چھُٹی حاصل کرلے اور کسی علت کا علاج معالجہ کرنے والے ماہر سے رابطہ کرے جو گھر پر کئے جانے والے علاج معالجے کے تمام اقدامات کی نگرانی کرے۔

علت کے علاج معالجے کے ان ابتدائی مراحل کی ابتدا پیشہ ورانہ مشاورت اور تنبیہات سے ہوتی ہے ''اس عرصے کے دوران علت میں مبتلا فرد اپنے آپ کو کھویا کھویا محسوس کرنے لگتا ہے ، اس لیے یہ بہت ضروری ہے کہ اس کے دوست اور احباب اس کے آس پاس موجود رہیں تاکہ وہ اس کو مشورے دیتے رہیں اور منشیات کے خطرات کے بارے میں بتاتے رہیں۔''۔ اس کے بعد قبل از فیصلہ کا مرحلہ آتا ہے جہاں علت میں مبتلا فرد کو صورتحال کے گھمبیر ہونے کے بارے میں احساس تو ہوتا ہے تاہم اس کو اس مشکل سے نکلنے کا کوئی راستہ  دکھائی نہیں دیتا۔ آخر میں موّثر فیصلے کا مرحلہ آتا ہے اور یہی وہ وقت ہوتا ہے جس میں علت میں مبتلا فرد اپنے علاج معالجے کے سلسلے میں بہت اہم فیصلہ کرتا ہے اور طبی ماہر سے ضروری مشورے طلب کرتا ہے۔

علت کے علاج معالجے کا اصل مرحلہ اس مرحلے پر شروع ہوتا ہے جب منشیات کو چھوڑنا پڑتا ہے؛ عموماً دو ہفتوں تک جاری رہنے والے اس عرصے کے دوران علت میں مبتلا فرد کے جسم سے منشیات کو نکالاجاتا ہے۔ اس مرحلہ پر ہونے والے درد کو کم کرنے کے لیے مریض کو کچھ ادویات لینی پڑتی ہیں اور یہ بہت اہم ہے کہ اس مرحلہ پر  اور اس کے بعد کے  علاج معالجے کے مراحل پر مریض دوبارہ منشیات استعمال نہ کرے۔ اس کے بعد کے مرحلہ پر بیہیوریئل تھیراپی کا مرحلہ آتا ہے جہاں یہ لازم ہے کہ مریض منشیات کے دوبارہ استعمال کرنے سے خود کو روکنے کے لیے نئے طریقے اور رویے سیکھے۔اس کے بعد نفسیاتی مشاورت کا مرحلہ آتا ہے؛ اس میں مریض کو انفرادی یا اجتماعی سائیکوتھیراپی کی ضرورت ہوتی ہے تاکہ اس کے اپنے احساسات اور خوف کوکھل کر اظہارکرنے کا موقع مل پائے۔ یہ بہت اہم ہے کہ ایک مرتبہ جب علت کا علاج معالجہ ہوجائے تو اس کے بعد بھی  مریض کو نفسیاتی معاونت ملتی رہے۔آخر میں ادویات کے ذریعے معاونت کا مرحلہ آتا ہے ، جس میں مریض کو بعض ادویات تک رسائی حاصل ہوتی ہے، جن کو ایک ماہر ڈاکٹر کی نگرانی میں حاصل کیا جاتا ہے ، یہ ادویات اس کو علت سے دور رہنے میں مددکرتی ہیں۔ یہ لازم ہے کہ مریض نسخہ میں تجویز کردہ خوراکوں کے مطابق ہی ان ادویات کو استعمال کرے۔

مزید پڑھیں >

22 جولائی 2017

مصر: منشیات کے علاج معالجے کی ہاٹ لائن پر کال کرنے والے ۳۶ فیصد افراد کی عمریں ۱۸ برس سے کم ہوتی ہیں

وزیرِ سماجی یکجہتی اور ڈرگ کنٹرول اینڈ ٹریٹمنٹ فنڈ ڈائریکٹوریٹ کی چیئر میں غدا ولی کہتی ہیں کہ رواں برس کے پہلے چھ ماہ کے دوران منشیات پر ضابطے اور علاج معالجے کی ہاٹ لائن پر کال کرنے والے افراد کی مجموعی تعداد میں ۱۸ برس سے کم عمر کال کرنے والے بچوں کی شرح فیصد مجموعی تعداد میں سے ۳۶  فیصد تک پہنچ چکی ہے۔

وزیرِ تعلیم وہ رہبری طارق شاکی کے علاوہ کئی وزارتوں اور غیر سرکاری تنظیموں کے اہلکاروں کی موجودگی میں ثانوی اسکولوں کے طلبہ میں  تمباکو نوشی، منشیات اور الکحل کی علت  کے حوالے قومی سروے کے نتائج کے بارے میں علان کرتے ہوئے ولی کا مزید کہنا تھا کہ رواں برس کے پہلے چھ ماہ کے دوران علت کے علاج معالجے اور مشورے کی ہاٹ لائن ''۱۶۰۲۳'' کو موصول ہونے والی مجموعی کالوں کی تعداد ۳۷۳۲۲ تھی، یعنی اسی عرصے کے دوران گزشتہ برس موصول ہونے والی کالوں کے مقابلے میں یہ تعداد دوگنی ہے۔

وزیر کا کہنا تھا کہ طلبہ میں ابتدائی سطح پر منشیات کے استعمال کا پتہ لگانے کے لیے نظام وضع کرنے ہنگامی بنیادوں پر ضرورت ہے،ساتھ ہی انہوں نے تعلیمی اداروں میں کام کرنے والے صحت کے عملے کی صلاحیتوں کو بہتر بنانے اورابتدائی سطح پر منشیات کے استعمال کا پتہ لگانے کے نظام کو قائم کرنے کی اہمیت پر بھی زور دیا۔ وزیر صاحبہ کے مطابق اسکولوں کی بسوں کے ڈرائیوروں میں منشیات کے استعمال کا پتہ لگانے کی مہم کو جاری رکھتے ہوئے ، بورڈ آف ٹرسٹیز کی شرکت کے ساتھ  اس عمل کو تعلیمی اور غیر تعزیری ڈھانچے کے اندر کرنا لازم ہے۔

مزید پڑھیں >

20 جولائی 2017

کیا آپ کو معلوم ہے کہ وہ کون سا ملک ہے جس نے پہلی مرتبہ دوافروشوں کے ہاں گانجے کی فروخت کو قانونی قرار دے دیا ہے؟

یوراگوئے کے دارالخلافہ مونٹی ویڈی میں جمعہ کے روز اہلکاروں نے اعلان کیا کہ رواں ہفتے ملک بھر میں موجوددوافروشوں کے ہاں تفریحی مقاصدکے لیے گانجے کی فروخت شروع کردی جائے گی۔

اس طرح یوراگوئے دنیا کا وہ پہلا ملک بن جائے گا جس میں گانجے کی پیداوار، فروخت اور استعمال  مکمل طور پر قانونی ہوگا۔

آئیندہ بدھ تک رجسٹر شدہ استعمال کنندگان دو اقسام کی منشیات میں  سے کسی ایک کا انتخاب کر پائیں گے اور محدود تعداد کے دوافروشوں کے ہاں سے وہ ہفتے میں ایک مرتبہ ۱۰ گرام تک منشیات خرید سکتے ہیں۔

نیشنل انسٹی ٹیوٹ فار کینابس کنٹرول کے مطابق ۴۷۱۱ افراد نے پہلے سے ہی رجسٹریشن کروالی ہے ۔ ان افراد کو ایک گرام کے لیے  ۱عشاریہ ۳  امریکی ڈالروں کی ادائگی کرنی پڑے گی ، جو اس سے پہلے غیرقانونی طور پر آنے والے گانجے کی قیمت سے کم ہے۔

یہ قدم یوراگوئے میں گانجے کو قانونی قرار دیئے جانے کے عمل میں حتمی قدم ہے، اس عمل کی ابتدا جوس موجیکا کے صدارتی دور میں سن ۲۰۱۳ میں ہوئی تھی۔

مزید پڑھیں >

19 جولائی 2017

یو این او ڈی سی کی نئی رپورٹ: ایک برس میں کولمبیا میں کوکا کی فصل کی پیدا وار ۵۰ فیصد تک بڑھ گئی

بگوٹا، اقوامِ متحدہ کے دفتر برائے منشیات اور جرائم (یو این او ڈی سی) کے انٹی گریٹڈ سسٹم فار مانیٹرنگ السٹ کراپ (ایس آئی ایم سی آئی) پراجیکٹ کی جانب سے تیار کردہ تازہ ترین کولمبیا کلٹی ویشن سروے کو جاری کردیا گیا ہے۔ اس میں دکھایا گیا ہے کہ کوکا کی کاشت کے علاقے میں ۵۲ فیصد تک اضافہ ہوگیا ہے جو سن ۲۰۱۵ میں ۹۶۰۰۰ ہیکٹرز سے بڑھ کر ۲۰۱۶ میں ۱۴۶۰۰ تک پہنچ گیا۔

اسی رپورٹ کے مطابق بہت زیادہ پیداوار کولمبیا کے ان علاقوں میں دیکھی گئی جو سرحدوں پر قائم ہیں ، خاص طور پر نارینو، پوتومایو اور نورتے ڈی سینٹاڈر میں، یہی وہ علاقے میں جن میں  ۲۰۱۵ کے سروے کے مطابق سب سے زیادہ کوکا کی فصل دیکھی گئی تھی۔

جہاں تک ۲۰۱۶ میں کوکین کی  ممکنہ پیداوار کا تعلق ہے تو   ایک اندازے کے مطابق یہ مقدار  ۸۶۶ میٹرک ٹن تھی ، یہ ۲۰۱۵ کے ۶۴۶ میٹرک ٹنز کے مقابلے میں ۳۴ فیصد کا اضافہ ہے۔

رواں برس کی رپورٹ میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ ۲۰۱۶ میں ۲۰۱۳ کے مقابلے میں کوکا کے پتوں کی قیمت ۴۳ فیصد زیادہ تھی ، سن ۲۰۱۳ میں ہی پہلی مرتبہ کوکا کی کاشت میں اضافے کی ابتدا ہوئی تھی۔

تازہ ترین سرے کے نتائج مایوس کُن ہونے کے ساتھ ساتھ ان میں کچھ مثبت چیزیں بھی شامل ہیں مثلاً کوکین کے پکڑے جانے میں ۴۹ فیصد تک اضافہ ہوا ہے ، ۲۰۱۵ میں پکڑی جانے والی کوکین کی مقدار ۲۵۳ ٹن تھی اور ۲۰۱۶ میں پکڑی جانے والی مقدار ۳۷۸ ٹن ہوگئی۔

پائیدار حل کے لیے ملکی حالات بڑی حد تک موافق ہیں کیوں کہ ملک کی حکمتِ عملی فصل کی بنیاد پر مداخلت سے علاقوں کی تبدیلی کی جانب توجہ مرکوز رکھے ہوئے ہے۔

پائیدار حل۔ اس میں تعاون اور غیرقانونی معیشت اور منظم جرائم کے لیے جامع عملدرآمدات لینے کی ضرورت ہے۔ اس میں یہ بھی ضروری ہے کہ آبادیوں کو غیرقانونی مسلح گروہوں کے دباؤ کے بغیر آزادنہ فیصلے کرنے دیئے جائیں اور علاقوں کی ترقی کی یقین دہانی کے لیے قانونی متبادل طریقوں کو فروغ دیا جائے۔

مزید پڑھیں >

منشیات اور نشہ آور

چالیس سے زیادہ تر نشہ آور ادویات اور مواد کے غلط استعمال ، پیداواری ممالک، بڑے بڑے اثرات، علامیتیں اور علاج کے متعلق جانیں۔

ڈاکٹر سے پوچھیں۔

خواہ علت میں آپ مبتلا ہوں یا کوئی آپکا قریبی عزیز، اس قسم کی کسی بھی علت کے متعلق معلومات کے لیے آپ کی پہلی ترجیح۔

GINAD

منشیات کی علت سے مقابلہ کرنے کے لیے ہسپتال منشیات کی علت سے شفایاب ہونے والوں کو ملازم رکھ رہے ہیں… https://t.co/p4wQQeFL0m

1 جولائی 2017

Pour lutter contre la toxicomanie, les hôpitaux embauchent des #toxicomanes rétablis https://t.co/URrnIZBsxt https://t.co/DIboeo7DBx

1 جولائی 2017

To Fight Drug Addiction, Hospitals Hire Recovering #Addicts https://t.co/V542kqoRhi https://t.co/0yp8XNiXIJ

1 جولائی 2017

الولايات المتحدة تستخدم مدمنين متعافين لمكافحة الإدمان على #المخدرات https://t.co/3RjGbiEdY5 https://t.co/lgOwGQ28Kp

1 جولائی 2017

Les dernières données révèlent les habitudes de consommation de drogues dans plus de 50 villes européennes… https://t.co/xF5yemtFbP

16 جون 2017